شاعری

pictureمجھے اذنِ جنوں دے دو

شاعرہ: شازیہ اکبر
موسمِ اشاعت: جنوری ۲۰۱۱ء
ا ہتماِمِ اشاعت:سرمد اکادمی، اٹک
قیمت:۲۰۰ روپے
انتساب: اُس ربِّ کائنات کی صنعت گری کے نام جس نے میرے خیال کو تمثیل کر دیا
تشکیل ای بک:نوید فخر

غزل

’’جان دے کر تجھے جینے کی دعا دیتے ہیں‘‘
کتنا انمول وفائوں کا صلہ دیتے ہیں

بامروت ہیں مرے شہر کے رہنے والے
لے کے بینائی مری ، دیپ جلا دیتے ہیں

حاکمِ وقت سے رکھتے ہیں عداوت لیکن
اس کی ہرہاں میں سبھی ہاں بھی ملا دیتے ہیں

کس قدر خوف سمایا ہے یہاں آنکھوں میں
خوفِ تعبیر سے ہم خواب بھلا دیتے ہیں
دن کو بے چین کیے رکھتی ہیں یادیں تیری
شب کو نیندوں سے تیرے خواب جگا دیتے ہیں

ایسے کرتے ہیں ادا فرض تری چاہت کا
ہم ترے بھولنے والوں کو بھلا دیتے ہیں

اب تو روتے ہیں مری موت پہ دشمن میرے
وقت کے بعد یہاں لوگ جزا دیتے ہیں

صفحات : 1 | 2 | 3 | 4 | 5 | 6 | 7 | 8 | 9 | 10 | 11 | 12 | 13 | 14 | 15 | 16 | 17 | 18 | 19 | 20 | 21| 22 | 23 | 24 | 25 | 26 | 27 | 28 | 29 | 30 | 31 | 32 | 33 | 34 | 35 | 36 | 37 | 38 | 39 | 40 | 41 | 42 | 43 | 44 | 45 | 46 | 47 | 48 | 49 | 50 | 51 | 52 | 53 | 54 | 55 | 56 | 57 | 58 | 59 | 60 | 61 | 62 | 63 | انڈیکس |

تازہ ترین

کیا آپ صاحب کتاب ہیں؟

کیا آپ چاہتے ہیں کہ آپ کی تصنیف دنیا بھر میں لاکھوں شائقین تک پہنچے ؟ تو کتاب ”ان پیچ“ فارمیٹ میں اور سرورق سکین کر کے ہمیں ای میل یا ارسال کریں، ہم آپ کے خواب کو شرمندہ تعبیر کریں گے۔

مزید معلومات کے لئے یہاں کلک کریں