شاعری

pictureمجھے اذنِ جنوں دے دو

شاعرہ: شازیہ اکبر
موسمِ اشاعت: جنوری ۲۰۱۱ء
ا ہتماِمِ اشاعت:سرمد اکادمی، اٹک
قیمت:۲۰۰ روپے
انتساب: اُس ربِّ کائنات کی صنعت گری کے نام جس نے میرے خیال کو تمثیل کر دیا
تشکیل ای بک:نوید فخر

غزل

دلوں کے آنگن میں ہم نے لاکھوں وفا کے موتی لُٹا دیئے ہیں
اسی احاطے میں کتنے لمحے ، زمانے کتنے بِتا دیئے ہیں

ہمیں تو لگتا ہے ہر قدم پر ، ہماری منزل یہیں کہیں ہے
کہ ہم نے ہر گام پر وفا کے گلاب اتنے کھلا دیئے ہیں

ہمیں بھی چاہت کی سرحدوں پر ملے تھے خدشوں کے اونچے پرچم
مٹا دیئے ہیں وہ سارے خدشے ، عَلَم وہ سارے جلا دیئے ہیں

نہ کُچھ ہے اوجھل نہ کُچھ نہاں ہے ، سبھی ہے روشن بھی عیاں ہے
گماں کی دھرتی پہ ہم نے اتنے یقیں کے سورج اُگا دیئے ہیں

کسی نے سارے چراغ اپنے جلا کے سونپے تھے آندھیوں کو
کسی نے اِک ہی دیئے کو لے کر چراغ کتنے جلا دیئے ہیں

صفحات : 1 | 2 | 3 | 4 | 5 | 6 | 7 | 8 | 9 | 10 | 11 | 12 | 13 | 14 | 15 | 16 | 17 | 18 | 19 | 20 | 21| 22 | 23 | 24 | 25 | 26 | 27 | 28 | 29 | 30 | 31 | 32 | 33 | 34 | 35 | 36 | 37 | 38 | 39 | 40 | 41 | 42 | 43 | 44 | 45 | 46 | 47 | 48 | 49 | 50 | 51 | 52 | 53 | 54 | 55 | 56 | 57 | 58 | 59 | 60 | 61 | 62 | 63 | انڈیکس |

تازہ ترین

کیا آپ صاحب کتاب ہیں؟

کیا آپ چاہتے ہیں کہ آپ کی تصنیف دنیا بھر میں لاکھوں شائقین تک پہنچے ؟ تو کتاب ”ان پیچ“ فارمیٹ میں اور سرورق سکین کر کے ہمیں ای میل یا ارسال کریں، ہم آپ کے خواب کو شرمندہ تعبیر کریں گے۔

مزید معلومات کے لئے یہاں کلک کریں